ارباب اقتداراور دولت پرست طبقے امریکی سرپرستی میں مظلوم عوام کا استحصال کررہے ہیں،پیر نظام الدین چشتی

لاہور(اپنے نمائندہ سے)ممتاز سیاسی و سماجی و صحافتی شخصیت پیر نظام الدین چشتی نے زاہدصدیقی سے ملکی و عالمی حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ میں آج معاشی ناہمواری کا یہ عالم ہے کہ ملک کی 40 فیصد دولت ایک فیصد آبادی والے طبقے کے ہاتھ میں مرکوز ہوکر رہ گئی ہے،طرفہ تماشہ دیکھئے کہ غربت کے باعث انتہا پسندی کے جنم لینے کی پھبتی کسنے والا امریکہ آج خود اِسی مرض میں مبتلا نظر آرہا ہے،حالانکہ اس امریکہ نے اپنے معاشرے میں طبقاتی استحصال سے عوام کی توجہ ہٹانے کیلئے بیسویں صدی کے چار عشروں تک ان کے سامنے سوویت یونین کا ہوا کھڑا کئے رکھا اور سوویت یونین کے خاتمے کے بعد اسلامی بنیاد پرستی، عسکریت پسندی اورانتہاپسندی کو مغربی تہذیب کیلئے خطرہ قرار دے کر انہیں جنگی جنون میں مبتلا کردیا،مگر یہودی ساہوکاروں کی سودی رقم پر پلنے والے صلیبی قزاقوں اور لٹیروں کے وہم وگمان میں بھی نہ تھا کہ انہوں نے افغانستان کے قدرتی وسائل کی لوٹ کھسوٹ سے جتنی دولت کمانے کا منصوبہ بنایا تھا اس سے کہیں زیادہ رقم انہیں اِس لاحاصل جنگ پر صرف کرنا پڑے گی اور وہ خسارے میں رہیں گے۔ اِس تناظر میں ابھرنے والا منظر نامہ ہمارے ان ارباب اقتدار اور دولت پرست طبقوں کیلئے لمحہ فکریہ ہونا چاہیے جو اپنے اس امریکی سرپرست جس کے اپنے ہاتھ سے اقتدار کی باگیں خشک اور بھر بھری ریت کی مانند آہستہ آہستہ پھسلتی جارہی ہے، پر تکیہ کئے پاکستان کی مظلوم عوام کا استحصال کررہے ہیں۔

294 total views, 2 views today

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *